Eid ul adha essay

عید الاضحٰی پر ایک مضمون

ہمارے ملک میں مختلف ذات اور مذہب کے لوگ رہتے ہیں۔ ہر سال ہم مختلف تہواروں کو بڑی خوشی کے ساتھ مناتے ہیں۔ عیدالاضحی ان تہواروں میں سے ایک ہے جسے ہم مختلف ناموں سے بھی جانتے ہیں۔ عید الاضحٰی اور بقرہ عید۔ یہ اسلام مذہب کا ایک خاص تہوار ہے جسے پوری دنیا کے مسلمان مناتے ہیں۔ اسے قربانی کا تہوار بھی کہتے ہیں۔

عید الاضحی کے معنیٰ

یہ عربی زبان کا لفظ ہے اور اس کی مراد "قربانی” سے ہے۔ اس کا مطلب ہے "قربانی کی عید”۔ یہ تہوار رمضان کے مقدس مہینے کے اختتام کے تقریباً Seventy دن بعد منایا جاتا ہے۔ عرب ممالک میں اسے عید الاضحی کے نام سے جانا جاتا ہے اور ہندوستان میں یہ بقرہ عید کے نام سے جانا جاتا ہے۔ یہ ایک بہت بڑا مسلم تہوار ہے جو بنیادی طور پر حضرت ابراھیم علیہ السلام کی سنت ہے جو حضرت ابراھیم علیہ السلام کے ایمان اور اللّٰہ تعالیٰ پر انکی عقیدت کو بیان کرتی ہے۔

مسلمانوں کے عقیدہ کے مطابق ، different styles about assisting solutions essay علیہ السلام کو اپنے بیٹے کو ذبح کرنے کا ایک خواب آیا لیکن انہوں نے اس پر دھیان نہیں دیا ۔ جب تین دن تک لگاتار وہی خواب آیا تو آپ کو یہ محسوس ہوا کہ یقیناً یہ خواب اللّٰہ تعالیٰ ہی کی طرف سے ہی اور کیونکہ نبیوں کے خواب سچّے ہی ہوتے ہیں۔ اسلیے وہ اس six sided supplement essay کے لیے بنا کچھ سوچے سمجھے اللّٰہ تعالیٰ کا حکم سمجھ کر راضی ہو گئے۔ اگرچہ وہ ایک اچھے آدمی تھے اور اپنے بیٹے سے بہت پیار کرتے تھے ، لیکن خدا کے ساتھ ان کی عقیدت اور اعتقاد اتنا مضبوط تھا کہ اُنہوں نے اپنے ہی پیارے بیٹے اسماعیل علیہ السلام کی جان لینے سے بھی دریغ نہیں کیا۔ اور جرأت مندانہ اقدام اور اپنے بیٹے کی قربانی دینے پر راضی ہو گئے۔

اللہ کی خاطر اپنے بیٹے کی قربانی کے لئے ابراہیم علیہ السلام کی رضا مندی نے اللہ تعالیٰ کی رحمت web of lays from beverley naidoo reserve review جوش دلایا اور اللّٰہ تعالیٰ نے انکے بیٹے کی جان بچانے کا سبب پیدا کیا، اور اسی وقت اسماعیل علیہ السلام کی جگہ قربان ہونے کے لیے جبرئیل علیہ السلام کے ذریعے قربانی کے لیے ایک مینڈھا بھیجا۔ یہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے ابراھیم علیہ السلام کے لیے ایک انعام تھا ۔ تاریخ اسلام کے اس مقدس واقعہ کی وجہ سے ہی تمام مسلمان ہر سال اللہ کی رحمتوں اور مغفرت کے لیے حضرت ابراھیم علیہ السلام کی سنت eid ul adha essay مطابق عید الاضحی مناتے ہیں۔

عید الاضحی بھی عید الفطر ہی کی طرح ایک مقدس دن ہے جو ہر سال دنیا بھر میں قربانی کرکے منایا جاتا ہے۔ عید الاضحی کو بقرہ عید کے نام سے بھی جانا جاتا ہے اور یہ اسلام کا دوسرا اہم تہوار ہے۔ عید الاضحی 10 ذی الحجہ کو حج کے مہینے میں اس وقت ہوتی ہے جب مکہ مکرمہ کے تمام عازمین حج کے واجبات انجام دیتے ہیں۔

پوری دنیا کے مسلمان اس مقدس تہوار عید الاضحی کے لئے بھرپور تیاری کرتے essays concerning shakespeare ersus othello تمام مسلمان قربانی کے لئے جانور خریدتے ہیں۔ اس کا چاند دس دن پہلے دیکھائی دیتا ہے اور اگلے دس دن کے بعد عید الاضحی منائی جاتی ہے۔ سب بہت خوش نظر آتے ہیں۔ اس دن essay upon my absolutely free time صبح سویرے اٹھتے ہیں، دانت eid ul adha essay کرتے ہیں، نہاتے ہیں اور بہترین لباس پہنتے ہیں blood theme essay خوشبو بھی لگاتے ہیں۔

نماز عید

لوگ عید گاہ میں نماز پڑھتے ہیں۔ نماز سورج طلوع ہونے کے بعد ادا کی جاسکتی ہے۔ eid ul adha essay اور خطبات کے اختتام پر مسلمان ایک دوسرے کو گلے لگاتے ہیں اور ایک دوسرے کو مبارکباد دیتے ہیں۔

sample about a good quite short argumentative essay سارے مسلمان اس موقع پر اپنے غیر مسلم دوستوں، پڑوسیوں، ساتھی کارکنوں اور ہم جماعتوں کو اپنے عید کے تہواروں پر دعوت دیتے ہیں تاکہ وہ اسلام اور مسلم ثقافت سے بہتر طور پر واقف ہوں۔ ہر طرف خوشی اور مسرت کا ماحول رہتا ہے۔

عیدگاہ

نماز عید کھلے علاقوں جیسے شہروں میں عیدگاہ یا بڑی مسجدوں یا محلے کی مسجدوں میں ادا کی جاتی ہے اور گاؤں میں کھیتوں ، برادری کے مراکز وغیرہ میں ادا کی جاتی ہے۔ نماز عید کے بعد مسلمان اپنے آس پاس کے نمازیوں سے اور دوستوں سے بڑی ہی خوشی کے ساتھ ایک دوسرے سے گلے ملتے ہیں اور پھر دن بھر یہاں تک کہ پورے تین دن تک اپنے عزیز و اقارب اور رشتےداروں کے ساتھ عید کی خوشیاں بانٹتے رہتے ہیں۔

You Could possibly Furthermore Like

Aab ice Zam Zam Essay On Urdu

Essay On Karachi With Urdu

Essay With Urdu | Allama Iqbal

Information Regarding Streams Involving Kashmir Area With Urdu

Essay With Mosam electronic Bahar/Spring Season

Essay upon Aab-e-Zam Zam inside Urdu

  

Related essays